بین الاقوامیصحت

پاکستان سے یو اے ای جانے والوں کیلئے تصدیق شدہ ویکسینیشن سرٹیفیکیٹ لازمی قرار

متحدہ عرب امارات نے سفری قواعد میں تبدیلی کرتے ہوئے حکومت پاکستان کو آگاہ کردیا ہے کہ یکم اگست سے تمام پاکستانی مسافروں کے لیے دفتر خارجہ اور امارات کے سفارت خانے سے تصدیق شدہ کووڈ-19 ویکسینیشن سرٹیفیکیٹ لازمی ہوگی۔
اسلام آباد میں قائم متحدہ عرب امارات کے سفارت خانے کی جانب سے حکومت پاکستان کو 14 جولائی کو لکھے گئے ایک خط میں کہا گیا ہے کہ ‘وزارت خارجہ، ابو ظہبی، متحدہ عرب امارات کی حکومت کی حالیہ ہدایت کے تحت یکم اگست سے نیشنل ڈیٹا بیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) سے جاری ویکسینیشن سرٹیفیکیٹ کی متحدہ عرب امارات کے سفارت خانے سے تصدیق کرانا لازمی ہوگا’۔
خط میں کہا گیا ہے کہ پاکستانی مسافروں کو ‘متحدہ عرب امارات کے سفر سے قبل قونصلرامور اور وزارت خارجہ اسلام آباد سے بھی سرٹیفیکیٹ کی تصدیق لازمی ہوگی’۔
ترجمان دفترخارجہ زاہد حفیظ چوہدری نے کہا کہ پاکستان مکمل طور پر متحدہ عرب امارات سے تعاون کرے گا اور دفترخارجہ پاکستانیوں کو متحدہ عرب امارات کے سفارت خانے کو بھیجنے سے قبل دفترخارجہ سے مصدقہ سرٹیفیکیٹ کے حصول میں بھی مدد کرے گا۔
انہوں نے کہا کہ ‘ہم نے سعودی عرب سے بھی رابطہ کیا ہے کہ وہ چینی ویکسین کی پاکستانیوں کے لیے منظوری دے دیں’۔
خیال رہے کہ متحدہ عرب مارات نے گزشتہ ماہ ایک حکم نامے میں 21 جولائی 2021 تک پاکستان سمیت 14 ممالک پر پروازوں پر عائد پابندی میں توسیع کردی تھی۔
ایئرمین (نوٹام) کو ایک نوٹس میں متحدہ عرب امارات کی سول ایوی ایشن اتھارٹی نے کہا تھا کہ کورونا وبا کے باعث پاکستان سمیت 14 ممالک سے پروازیں 21 جولائی 2021 تک بدستور معطل رہیں گی۔
انہوں نے کہا تھا کہ کارگو، کاروباری اور چارٹر پروازیں اس پابندی سےمستثنیٰ ہوں گی۔
متحدہ عرب امارات نے 21 جولائی تک جن ممالک سے پروازوں پر پابندی عائد کی ہے، ان میں پاکستان کے ساتھ ساتھ بھارت، لائبیریا، نیمیبیا، سیرالیون، جمہوریہ کانگو، یوگنڈا، زیمبیا، ویت نام، بنگلہ دیش، نیپال، سری لنکا، نائیجیریا اور جنوبی افریقہ شامل ہیں۔
اس سے قبل 19 جون کو متحدہ عرب امارات نے کہا تھا کہ ان لوگوں کے پر داخلے پر پابندی ہو گی جو گزشتہ 14 دنوں میں ہندوستان، نائیجیریا اور جنوبی افریقہ کے دورے کر چکے ہیں اور 23 جون سے نرمی کا عندیہ دیا گیا تھا۔
نیشنل کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر (این سی او سی) نے رواں ماہ کے اوائل میں اعلان کیا تھا کہ یکم اگست سے ویکسینیشن سرٹیفکیٹ کے بغیر ہوائی سفر کرنے پر پابندی عائد ہوگی۔
این سی او سی کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا تھا کہ ڈیلٹا وائرس درحقیقت بھارتی وائرس ہے جس کو انتہائی خطرناک قرار دے دیا گیا ہے اور پاکستان میں ڈیلٹا وائرس کے کیسز سامنے آنے لگے ہیں جو کورونا کی چوتھی لہر بھی ہو سکتی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Diyarbakır koltuk yıkama hindi sex